41

بہت دیر کر دی مہربان آتے آتے

سپریم کورٹ آف پاکستان کے چیف جسٹس کی طرف پنجاب کے ہسپتالوں کی حالت زار پر از خود نوٹس کے بعد پنجاب حکومت کے بیورو کریسی کے افسران کی بدحواسیاں خواب غفلت سے بیدار ہو گئے .8سال پہلے چیف سیکرٹری پنجاب کو کی شکایت پر ایم ایس سول ہسپتال سرگودھا سے رپورٹ طلب کر لی.گئ
حیدرآباد ٹائون کے رہائشی شہری حافظ صدیق ثانی گوندل نے2010میں سول ہسپتال سرگودھا میں زیرعلاج اپنی خالہ کے علاج معالجہ میں ڈاکٹروں اور عملے کی مجرمانہ غفلت کے بارے میں چیف سیکرٹری پنجاب کو شکایت کی تھی اور میڈیا میں شائع ہونے والی خبروں کے تراشے بھی ارسال کیے تھے
سی دوران ان کی خالہ وفات پا گئی تھیں چیپ جسٹس کی طرف سے ہسپتالوں کی صورتحال کے بارے میں نوٹس لیے جانے کے بعد بیورو کریسی کے اعلیٰ افسران بھی خواب غفلت سے بیدار ہو گئے 8 سال پہلے کی گئی شکایت کو آج تک کسی نے نہ پوچھا اور.اس پر اب 2018 میں 8 سال پہلے کی گئی شکایت پر نوٹس لے لیا گیا اور مریضہ کے وفات پاجانے کے آٹھ سال بعد اس شکایت پر فوری طورپررپورٹ طلب کر لی گئی ہے
دلچسپ امر یہ ہے کہ مریضہ کو وفات پائی بھی آٹھ سال کا عرصہ گزر گیا ہے آٹھ سالوں کے دوران کسی بھی انکواری آفیسر نے اس شکایت کے بعد شکایت کندہ سےاس بارے میں کوئی رابطہ نہ کیا آٹھ سال بعد اب 2018میں ٹیلی فون کال کرکے ہسپتال انتظامیہ کی طرف سے اس شکایت کے بارے میں معلومات حاصل کی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں